مجید نظامی کی رحلت۔ ابھی کل کی ہی تو بات ہے
Jul 15, 2015

ابھی یہ کل کی بات ہی نظر آتی ہے۔ گزشتہ سال کے ماہ رمضان المبارک کا تیسرا روزہ تھا جب ہمارے مربی و محسن، امامِ صحافت مجید نظامی اپنے معمولات کے مطابق مقررہ وقت پر آفس آئے اور دفتری معاملات نمٹانے کے بعد روٹین کی ایڈیٹوریل میٹنگ کی۔ اگرچہ ان کے چہرے پر تھکن کے آثار نمایاں تھے اور دوران گفتگو ان کا لہجہ بھی خاصا دھیما تھا مگر انہوں نے حسبِ معمول ادارئیے اور شذرات کے لئے تجویز کئے گئے موضوعات پر اپنی فہم و تفکر کے مطابق کھل کر تبادلہ خیال کیا اور ان کی منظوری دی۔ ایڈیٹوریل میٹنگ کے بعد وہ گھر روانہ ہو گئے۔ ان کے رخصت ہونے کے بعد ان کے دیرینہ خدمت گار محمد منیر نے مجھے بتایا کہ آج نظامی صاحب کواپنی نشست سے اٹھتے ہوئے کافی دقت کا سامنا کرنا پڑا ہے میں نے انہیں سہارا دے کر اٹھایا، خدا خیر کرے۔ آج ان کی طبیعت کافی ناساز نظر آئی ہے۔ پھر ہمیں اطلاع ملی کہ نظامی صاحب کو چیک اپ کے لئے پی آئی سی لے جایا گیا ہے، دل سے ان کی صحت مندی اور درازیٔ عمر کی دعائیں نکلتی رہیں۔ پی آئی سی میں دو تین روز کے علاج معالجہ کے بعد انہیں ڈاکٹرز ہسپتال منتقل کر دیا گیا اور وہیں پر 27ویں رمضان المبارک بتاریخ 26 جولائی 2014ء کو اپنی زندگی کا آخری سانس لیتے ہوئے وہ خالقِ حقیقی سے جا ملے چنانچہ ماہ رمضان المبارک کے تیسرے روزے کا دن نوائے وقت فیملی کے سربراہ محترم مجید نظامی کے آفس آنے کا آخری دن تھا جب ان کی رہنمائی میں ہم نے جملہ ادارتی فرائض انجام دئیے۔ و ہ یقیناً ربِ کائنات کے عزیز بندوں میں شامل تھے اس لئے 27رمضان المبارک کا لیلۃ القدر کا مقدس دن ان کے وصال کا دن مقرر ہوا۔ اس طرح وہ خدائے وحدہ لا شریک کی رحمتوں، بخششوں، فضیلتوں کے خزانے سمیٹتے ہوئے اس جہانِ فانی سے رخصت ہوئے۔ آج انہیں ہم سے جدا ہوئے اسلامی مہینے کے اعتبار سے پورا ایک سال ہو گیا ہے مگر ہمیں آج بھی یہی محسوس ہوتا ہے جیسے وہ اپنے معمولات کے مطابق آفس میں تشریف رکھتے ہیں اور ہماری رہنمائی کر رہے ہیں۔ یہ خدا کی محبوب ہستی کی حیثیت سے ان کے زندہ جاوید ہونے کی علامت ہے۔ اگرچہ وہ قبرستان میانی صاحب میں ابدی نیند سو رہے ہیں مگر جملہ ادارتی ذمہ داریاں نبھاتے ہوئے ہمیں آج بھی یہی محسوس ہوتا ہے کہ ہمارے لئے ان کی ہدایات و رہنمائی کا چشمہ جاری و ساری ہے اور وہ اسی طرح ہماری رہنمائی کر رہے ہیں جو ان کی زندگی میں ان کا خاصہ رہی ہے۔

مجھے ادارہ نوائے وقت میں 33 سال تک محترم مجید نظامی کی سرپرستی، رہنمائی اور رفاقت میسر رہی۔ اس عرصہ میں زندگی کے کئی نشیب و فراز کا سامنا رہا۔ دفتری امور میں بھی کٹھنائیوں کے کئی مراحل آئے مگر محترم مجید نظامی کی پدرانہ شفقت ہمیشہ میرے شامل حال رہی۔ میں نے نوائے وقت کے جس بھی شعبے میں کام کیا اس میں محترم مجید نظامی کی خواہش اور رضامندی کا ہی عمل دخل ہوتا تھا۔ ادارے میں رہتے ہوئے کسی خاص شعبے میں ذمہ داری یا منصب کی کبھی کوئی خواہش رہی نہ کبھی اس کا اظہار کیا۔ محترم مجید نظامی میرے لئے جو ذمہ داری اور جو منصب مناسب سمجھتے وہ تفویض کر دیا کرتے تھے چنانچہ آج بھی مجھے یہی محسوس ہوتا ہے جیسے میں خاندانِ نوائے وقت کے رکن کی حیثیت سے آج بھی محترم مجید نظامی کی سرپرستی میں ان کی خواہش کے مطابق ہی اپنی ذمہ داریاں نبھا رہا ہوں۔ ان کی سرپرستی و رفاقت سے وابستہ یادوں کے آج ذہن میں جھکڑ چل رہے ہیں۔ ہر یاد اپنی جگہ بیان کی متقاضی ہے مگر ان سب کا ایک کالم میں سمونا ممکن نہیں۔ شائد ایک ضخیم کتاب کے حجم سے بھی یہ یادیں باہر کو اچھل پڑیں۔ خدا نے اس حیات فانی میں کچھ مہلت دی تو محترم مجید نظامی سے وابستہ یادوں کو کتابی شکل دینے کی کوشش کروں گا۔ فی الوقت نوائے وقت کے شعبہ ایڈیٹوریل میں محترم مجید نظامی کی سرپرستی کے آٹھ سالوں کی سنہری یادیں امڈی پڑی نظر آ رہی ہیں۔

میں نوائے وقت کے چیف رپورٹرکے منصب سے الگ ہونے کے بعد محترم مجید نظامی کی ہدایات و خواہش کے مطابق شعبہ رپورٹنگ میں اپنی ’’بیٹ‘‘ کی ذمہ داریاں ادا کرنے کے ساتھ ساتھ ہفتہ وار کالم لکھنے کا سلسلہ بھی شروع کر چکا تھا۔ ذہن میں یہی تھا کہ نوائے وقت میں اب یہی میری آخری منزل ہے مگر ستمبر 2006ء کے ایک دن محترم مجید نظامی نے مجھے طلب فرمایا اور کہا کہ میری خواہش ہے آپ شعبہ رپورٹنگ سے ایڈیٹوریل میں آ جائیں۔ میں نے کسی پس و پیش کے بغیر سرِ تسلیم خم کیا اور محترم مجید نظامی کی رضا کے مطابق شعبہ ایڈیٹوریل کے لئے اپنی رضامندی ظاہر کر دی چنانچہ اسی وقت محترم مجید نظامی نے شعبہ ایڈمن کے متعلقہ صاحب کو بلوا کر بطور اسسٹنٹ ایڈیٹر شعبہ ایڈیٹوریل میں میری منتقلی کے احکام صادر فرما دئیے۔ اس طرح نوائے وقت کے شعبہ نیوز، میگزین اور رپورٹنگ سے ہوتے ہوئے میں شعبہ ایڈیٹوریل تک آ پہنچا۔ چونکہ لکھنے لکھانے سے پہلے بھی شغف تھا اس لئے مجھے اس شعبے میں کام کرتے ہوئے بھی کسی دقت کا سامنا نہیں کرنا پڑا جبکہ محترم مجید نظامی کی پل پل سرپرستی بھی شامل حال تھی۔ چونکہ مجید نظامی صاحب کے ساتھ روزانہ ایڈیٹوریل میٹنگ ہوتی تھی اس لئے ان سے روزانہ رہنمائی لینے کا موقع بھی ملتا رہا۔ روزانہ مقررہ وقت پر آفس آنا اور دوسرے دفتری امور نمٹانے کے ساتھ ساتھ ایڈیٹوریل میٹنگ لینا بھی ان کا معمول تھا جس میں نوائے وقت شعبہ ایڈیٹوریل کے ارکان کے علاوہ ایڈیٹر دی نیشن بھی شریک ہوتے اور مختلف موضوعات پر سیر حاصل بحث کے بعد ادارئیے اور شذرات کے موضوعات کا انتخاب ہوتا۔ اتوار کے روز وہ اپنے گھر پر صرف ڈپٹی ایڈیٹر نوائے وقت کے ساتھ ایڈیٹوریل میٹنگ کرتے۔ اگر کبھی ان کی طبیعت ناساز ہوتی یا کسی دوسری مصروفیت کی وجہ سے آفس تشریف نہ لا سکتے تو ٹیلی فون پر مجوزہ موضوعات پر تبادلہ خیال کرکے اداریہ اور شذرات کے لئے گائیڈ لائن دیتے اور انتظامی معاملات پر بھی ہدایات جاری کر دیتے۔ اسی طرح جب انہیں آفس آنے سے پہلے نظریہ پاکستان ٹرسٹ میں جانا ہوتا تو گھر سے ان کا پیغام آ جاتا کہ آفس کے باہر سڑک پر آ جائو، ان کے ڈرائیور نے اس عرصہ میں ان کی گاڑی کھڑی کرنے کا ایک خاص مقام منتخب کر رکھا تھا، ہمیشہ وہیں ان کی گاڑی پارک ہوتی اور پھر وہ مجھے اپنے ساتھ والی نشست پر بٹھا کر جملہ ادارتی امور پر تبادلہ خیال کرتے اور ہدایات جاری فرماتے۔ کبھی ایسا بھی ہوتا کہ وہ مجھے گاڑی میں ساتھ ہی نظریہ پاکستان ٹرسٹ تک لے جاتے اور راستے میں اداریہ اور شذرات کے موضوعات پر تبادلہ خیال کرتے رہتے۔ اگر وہ بیرون ملک جاتے تو بھی مقررہ وقت پر وہیں سے روٹین کے مطابق ٹیلی فون کرکے ضروری ہدایات صادر کر دیتے۔ اس طرح شعبہ ایڈیٹوریل میں ان کی سرپرستی میں آٹھ سال تک کام کرتے ہوئے کوئی ایک دن بھی ایسا نہیں گزرا ہو گا جب ان سے بالمشافہ یا ٹیلی فونک رابطہ نہ ہوا ہو۔ شعبہ ایڈیٹوریل میں آنے کے دو ماہ بعد ہی انہوں نے مجھے ڈپٹی ایڈیٹر ایڈیٹوریل کی ذمہ داریاں تفویض کر دیں اور پھر ڈپٹی ایڈیٹر کی جملہ ذمہ داریاں بھی مجھے تفویض ہو گئیں۔ مجھے آج بھی یہی محسوس ہوتا ہے کہ میں محترم مجید نظامی کی سرپرستی میں ہی یہ ذمہ داریاں نبھا رہا ہوں۔ انہوں نے اپنے برادر مکرم حمید نظامی مرحوم کے ودیعت کردہ جن صحافتی اصولوں کا دامن تھاما تھا، اپنی زندگی کے آخری سانس تک وہ اس پر کاربند رہے۔ وہ کہا کرتے تھے کہ میں پاکستان کے لئے جانبدار ہوں اور ہمیشہ جانبدار رہوں گا چنانچہ انہوں نے عملی طور پر بھی صرف پاکستان کی بقا‘ مضبوطی اور استحکام کے لئے کام کیا اور اس مقصد کے لئے نظریہ پاکستان کو حرزِ جاں بنائے رکھا۔ وہ نظریہ پاکستان میں کمزوری پیدا ہونے کو پاکستان کی بنیادوں میں کمزوری در آنے سے تعبیر کیا کرتے تھے اس لئے وہ زندگی بھر کوشاں رہے کہ بالخصوص نئی نسل کو نظریہ پاکستان سے آگاہ و روشناس رکھا جائے۔ چنانچہ نوائے وقت گروپ کے پلیٹ فارم کے علاوہ نظریہ پاکستان ٹرسٹ اور ایوان کارکنان تحریک پاکستان کے پلیٹ فارم پر بھی وہ نوجوان نسل کو نظریہ پاکستان سے روشناس کرانے اور اس کے ساتھ پیوستہ رکھنے کا فریضہ سرانجام دیتے رہے۔ آج نوائے وقت گروپ کی شکل میں ان کی روشن کی ہوئی شمع اسی طرح روشن ہے اور قومی صحافت میں پاکستان کے لئے جانبداری کا ٹھوس پیغام دے رہی ہے۔ یہ ان کی صاحبزادی محترمہ رمیزہ نظامی کا اعزاز ہے کہ انہوں نے مرحوم مجید نظامی کی روشن کی ہوئی شمع کو ہی صحافت کی آبیاری میں اپنے لئے مشعل راہ بنایا ہے۔ محترم مجید نظامی کی برسی تو عیسوی کیلنڈر کے مطابق 26 جولائی کو ہی منائی جائے گی۔ تاہم قمری کیلنڈر میں ماہ رمضان المبارک کی 27 ویںتاریخ بھی اب ہمیشہ ان کی یادوں کے ساتھ منور رہے گی۔ ذات باری تعالیٰ نے ان کی رحلت کے لئے اس مقدس دن کا انتخاب کرکے ان کی بلند درجہ جنت مکانی کا پہلے ہی اہتمام کر دیا ہوا ہے سو ان کی یادیں 27 رمضان المبارک کو بھی تازہ رہیں گی۔

 ’’خدا رحمت کنند ایں عاشقانِ پاک طینت را‘‘
    Bookmark and Share   
       Copyright © 2010-2011 Saeed Aasi - All Rights Reserved info@saeedaasi.com